Skip to Content

ممبران ایگری ٹوورزم کلب جامعہ زرعیہ فیصل آباد کا قادر بخش فارم کا دورہ

ممبران ایگری ٹوورزم کلب جامعہ زرعیہ فیصل آباد کا قادر بخش فارم کا دورہ

Be First!
by October 14, 2018 News

Share This:

*قادر بخش فارم پر فطرت کی رعنائیاں*۔
ایگری ٹوورزم ڈویلپمنٹ کارپوریشن کی جانب سے مورخہ ١٣ اکتوبر ٢٠١٨ کو قادر بخش فارم کا تعلیمی و تفریحی دورہ کرنے کا پروگرام طے پایا۔علی الصبح *پریذیڈنٹ آف اے ۔ٹی۔ سی مسٹر سعد راجا* کی زیرِ نگرانی وائس پریذیڈنٹ *مسٹر عبدالوہاب* اور کیبنٹ کے دیگر *باذوق اور ایگری ٹوورزم سے خاص شغف رکھنے والے* ممبران معلومات کے انمول موتی اپنی جھولیوں میں سمیٹنے کے لیے جامعہ زرعیہ سے روانہ ہو گئے۔محفوظ سفر کی ضمانت کے طور پر *مسٹر محمد مبین* نے دعاے سفر بلند آواز میں تلاوت کی۔ اور دورانِ سفر بوریت کو رد کرنے کے لیے اپنی غیر سنجیدہ طبعیت کو بروے کار لاتے ہوے ہر فرد کے لیے تفننِ طبع کا سامان فراہم کیا۔ بالآخر ٩ بجے کے قریب ہم فیصل آباد کی مشہور و معروف *بیسٹ نرسری* کی دہلیز پر جلوہ افروز ہوے۔ جو اپنے نام کی طرح اپنے کام یعنی پودوں کی افزائش میں بھی بہترین ہے۔ نرسری میں انواع و اقسام کے آرائشی پودے اور انکی مزید کئی نسیں دیکھنے کو ملیں۔ جن کو دیکھ کر دل بے ساختہ کہہ اٹھا۔ 
*فبائ الا ربکما تکذبان*۔

44043458_1365684126895472_1771103745317273600_n
نرسری میں *سر طارق تنویر*، جن کا نام ایگری ٹورزم میں کسی تعارف کا محتاج نہیں، اور سر بیسٹ نرسری کے سرپرستِ اعلی سر ریحان صاحب کی ہمراہی میں ہم نے نرسری کا تفصیلاً دورہ کیا۔ سر ریحان صاحب نے ایگری ٹورزم کی افادیت اور سرمایہ کاری کے ان گنت مواقع کے بارے معلومات فراہم کیں ۔ انہوں نے اپنی زندگی کے جاندار تجربات کو ہمارے سامنے کھلی کتاب کی مانند پیش کیا۔ جو کہ مستقبل میں یقیناً ہمارے لیے مشعلِ راہ ثابت ہونگے۔ دوسرے ممالک سے درآمد شدہ قیمتی اور کم یاب پودوں کی یونیک کولیکشن دیکھنے کو ملی۔ سر ریحان صاحب نے پودوں پر موسمی اثرات اور اور انکے حیران کن فوائد اور خوائص سے آگاہ کیا۔

44098171_1365684573562094_5139523196864692224_n

ان پودوں کی خصوصیات اور نوادریت کا اندازہ اس امر سے لگایا جا سکتا ہے کہ وہاں پر موجود ایک ایک پودے کی قیمت کئ لاکھ سے تجاوز کر رہی تھی۔ جو کہ دوسرے ممالک سے درآمد شدہ ہونے کے ساتھ ساتھ سر طارق اور سر ریحان صاحب کی دن رات کی انتھک محنت کا نتیجہ تھے۔
بطورِ میزبان سر ریحان صاحب نے تمام کیبنٹ ممبران کو فراخ دلی سے چاے اور دیگر لوازمات پیش کرتے ہوے حقِ میزبانی بخوبی ادا کیا۔ ساڑھے دس بجے کے قریب ہماری بس نرسری سے قادر بخش فارم کی جانب رواں دواں ہو گئی۔ جو کہ ایگری ٹوورزم کا ہیڈ آفس بھی ہے۔ یہ فارم قدرت کے حسن اور خالص آب و ہوا کا عظیم الشان پلیٹ فارم تھا۔ جہاں پر خالص ترین آب و ہوا کے ساتھ ایک اور نعمت یہ میسر آئی کہ انتہائی پر خلوص اور سادہ مزاج لوگوں سے گفت و شنید کا موقع ملا۔اس فارم کے بانی سر طارق تنویر صاحب نے گرمجوشی اور عاجزی کے ساتھ ہمارا خیر مقدم کیا۔ *قدرت اپنے شباب کا قہر ڈھاتےہوئے آنے والے لوگوں کو مناظرِ فطرت کی دلکشی سے مسحور کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑ رہی تھی۔

43951964_1365684243562127_7296195832905203712_n

کہیں پام کے کئ اقسام کے بلند و بالا درخت اپنی شاخوں کو بازوں پھیلاے ہمارااستقبال کر رہے تھے اور کہیں بیلوں کے پتے جھک جھک کر قدم بوسی کر رہے تھے۔ کسی جگہ cactus کی کئی سو اقسام اپنی جوبصورتی کے جلوے لیے کھڑے تھے اور وقتِ رخصت اپنے کانٹوں سے ہمارے دامن تھامتے ہوئے ہمیں چند سعاعتیں اور اپنی رفاقت میں رکھنا چاہتے تھے۔ جیسے کہہ رہے ہوں کہ آج جانے کی ضد نہ کرو۔*
مگر نہ چاہتے ہوئے بھی بھاری دل کے ساتھ ان کوچھوڑتے ہوئے ہم سر طارق صاجب کی رہائش گاہ کی طرف بڑھے۔ جہاں پر turmeric کے خوشبودار اور خوش ذائقہ قہوے کے ساتھ ہمیں سرو کیا گیا۔ اور اس دوران طارق صاحب اپنے تجربات اور عم کے خزانے میں سے چند انمول موتی ہماری جانب اچھالتے رہے۔اور ہر کسی نے ہر چند اس دولت کو سمیٹا۔
مزید وہاں پر petrified wood کے چند نوادرات دیکھنے کو ملے جو کہ ان کی قدرت کو محفوظ کرنے کی لگن اور جذبے کو بیان کرنے کے لیے کافی ہے۔حسین مناظر کے آنگن میں بانس کے درختوں کے زیرِ سایہ یہ عمارت اپنے پورے قد کے ساتھ کھڑی ہے۔ 
ایک اور قابلِ تحسین عنصر *فنانس کے سرپرست محمد بلال* کا کچن گارڈننگ کا ورک ہے جوکہ پر کشش اور قابلِ داد ہے۔ادھر ہی ایک کسان *اللہ دتہ*، جو کہ معمر شخصیت کے حامل تھے، انہوں نے *قنیوا* بطور سپر فوڈ متعارف کروایا۔ اور بہت دلچسپ انداز میں اپنی کامیاب زندگی کی مختصر روداد سنائی۔ انہوں نے کہا کہ ” تعلیمی ڈگریاں یا سندیں کامیاب زندگی کی ضامن نہیں ہیں بلکہ خداداد صلاحیتوں کا نکھار ، اپنی ذات پر اعتماد اور خود شناسی آپکی کامیابی کے میدان میں ہتھیار ہیں۔ “۔ ان کے بعد سر طارق صاحب نے غیر موجود اراکین کیبنٹ کے بارے تشویش اور کسی حد تک افسوس کا اظہار کرتے ہوے کہا کہ *کلب کے ٹورز کو کامیاب بنانے کیلیے ہر کیبنٹ ممبر کو فرض شناس اور پر عزم ہونا چاہیے۔ اسی میں اسکی ترقی کا راز مضمر ہے۔*

44038426_1365684686895416_1380140839526727680_n

اسکے علاوہ ایگری ٹوورزم اور ایگریکلچر کی افادیت پر مفصل بحث مباحثہ ہوا۔ اور انہوں نے نہایت جامع طریقے سے اسکی اہمیت مختلف حوالوں سے سمجھانے کی کامیاب سعی کی۔ تاکہ ہم لوگ ان کے مشن کو بڑھوتری دیں۔ اس ملک و قوم کو مضبوط کندھا فراہم کریں۔ اپنی مفلوج معیشت کی بیساکھی بنیں۔ تاکہ اللہ سبحان و تعالی پاکستان اور آنے والی نسلوں کو خوشحالی کی نئی صبح دکھاے۔
معلومات اور آگاہی کے بھر پور پھول نچھاور کرنے کے بعد دیہی روایت میں زندگی کی رمق پیدا کرنے کے لیے تمام مہمانوں کی خالص دیسی ساگ، بیسن کی روٹی ، تازہ مکھن املی کی چٹنی ، تازہ لسی اور سویٹ ڈش میں گڑ والے چاول اور آملے کے مربع کے ساتھ تواضع کی گئی۔ کھانا سادہ مگر اشتہا انگیز تھا۔ ذائقے اور معیار میں یکساں من پنسد کھانے پر سب نے خوب دعوت اڑائی۔ کھانے سے فراغت کے بعد pottry کے فارم کی طرف بڑھے۔ جہاں مٹی سے بنی طرح طرح کی آرائشی اشیا کی نمائش قابلِ دید اور قابِل داد تھی۔ وہ جگہ انسانی مشقت کا دل آویز بازار سجاے بیٹھی تھی۔ انسانی ہنر مندی کے منہ بولتے ثبوت جگہ جگہ پڑے تھے۔

44028267_1365684353562116_1560463160253612032_n

الغرض قادر بخش فارم قدرت کے حسین مناظر اور انسانی ہنر مندی کا متاثر کن مرقع ہے۔ جہاں نہ صرف فطرت کی دلکشی جوبن پر ہے بلکہ انسان کے خوبصورت تخیل کی عملی تصویر بھی ہے۔ تقریباً اڑھائی بجے کے قریب سب لوگ خالص ہوا اور تاثر سے بھرے دل لیے حسین لمحوں کو سمیٹتے واپسی کیلئے روانہ گئے۔ اور پابندئِ وقت کے تقاضوں کو پورا کرتے ہوے ٹھیک ٣ بجے تمام ممبرانِ اے۔ ٹی ۔ سی۔ جامعہ زرعیہ واپس پہنچ گئے۔ اسطرح ایگری ٹوورزم کلب کا ایک اور کامیاب ٹوور اپنے اختتام کو پہنچا

www.atdcpakistan.com

Agri tourism Club UAF Visit — in Agri Tourism Development Corporation of Pakistan
Previous
Next

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*